fbpx

تو جو چاہے بھی تو صیّاد نہیں ہونے کے

Broken Heart

Broken Heart

تو جو چاہے بھی تو صیّاد نہیں ہونے کے
لب ہمارے لبِ فریاد نہیں ہونے کے

کوئی اچھی بھی خبر کان میں آئے یا ربّ
ایسی خبروں سے تو دل شاد نہیں ہونے کے

تو رہے ہم سے خفا کتنا ہی چاہے لیکن
ہم کبھی تجھ سے تو ناشاد نہیں ہونے کے

کارِ دنیا کو ہیں درکار ہماری راہیں!
کارِ دنیا سے تو آزاد نہیں ہونے کے

ان گنت جاگتے چہرے گئے مٹی کے تلے
اب نئے ظلم تو ایجاد نہیں ہونے کے !

تاقیامت وہی اک نام رہے گا آباد!
ہم کبھی مستقل آباد نہیں ہونے کے

خاک ہو جائیں گے ہے یہ تو مقدّر اپنا
ہم مگر وہ ہیں کہ برباد نہیں ہونے کے

چاہے نمرود ہو فرعون ہو یا کہ ہو یزید
صاحبِ شجرہ و اولاد نہیں ہونے کے

اس کے کوچہ میں میاں خاک اُڑاتے کیوں ہو
تم سے مجنوں تو اُسے یاد نہیں ہونے کے

وہ زمانے کہ عدیل ہم بھی تھے اُس کی پہچان
وہ زمانے تو اُسے یاد نہیں ہونے کے
عدیل زیدی