fbpx
اسطرح کرتے ہیں نیکی لوگ مجبوری کیساتھ
روزوشب کا یہ سلسلہ ہے کیا
وقت ہر اِک غبار سے باہر
حال کچھ اسطرح دلوں کا ہے
مروت تھی کچھ گِلے تھے کہیں
یہ زہر ہے یا کوئی نشہ مٹھاس کا
اِک نئے دور کی بنیاد کو رکھا جائے
آر سے پار نہیں نکلا
پھول گالوں کو تو آنکھوں کو کنول کہتا رہا
اُسی کا نام لیا جو غزل کہی میں نے
چھوڑی ہوئی بستی کا وہ منظر نہ ملیگا
شام سے تنہا کھڑا ہوں یاس کا پیکر ہوں میں
کمرے کی کھڑکیوں پہ ہے جالا لگا ہوا
اب نظر آنا بھی اُس کا کہانی بن گیا
کام بھی کرنا جنوں کا تو نہ ظاہر ہونا
گرے ہیں لفظ ورق پہ لہو لہو ہو کر
کچھ ایسے خشک ہوتا جارہا ہوں
طاق پر جزدان میں لپٹی دُعائیں رہ گئیں
اس قدر بھی تو نہ جذبات پہ قابو رکھو
ہلے مکاں نہ سفر میں کوئی مکیں دیکھا