fbpx

سنبھل ہی جائیں گے

ہمیں یقیں ہے مصائب یہ ٹل ہی جائیں گے
جو گررہے ہیں تو اِک دن سنبھل ہی جائیں گے
یہ وقت سب پہ کڑا ہے مگربہ فیضِ حرفِ دعا
سکوتِ مرگ کے سائے بھی ڈھل ہی جائیں گے
میرے عزیزو! زمانے کے چارہ ساز بنو
کہ ساتھ اپنے یہ اچھے عمل ہی جائیں گے
جو ہوچکے ہیں ترازو میری رگِ جاں میں
اذیتوں کے وہ ِنشتر ِنکل ہی جائیں گے
کسی کی راہ کے کانٹے اٹھائو تُم پہلے
تمہاری راہ کے پتھر پگھل ہی جائیں گے

Sahil Munir

Sahil Munir

ساحل منیر