fbpx

زلف ہوتے تیرے چہرے پہ بکھر جاتے

زلف ہوتے تیرے چہرے پہ بکھر جاتے
لفظ ہوتے تیرے لہجے میں اُتر جاتے

تم نہ ہوتے تو اس شہر پرُفتن میں
تیری محفل سے اُٹھتے تو پھر کد ھر جاتے

تیرے شہر میں ہیں تو وجہ تو ہی ہے
ورنہ نہ جانے کہاں در بدر جاتے

تیرے عشق نے بو تل میں ہی رکھا قید مجھے
ہوش میں ہوتے تو شا ئید گھر جاتے

شکر ہے ساگر عشق نے کیا بدنام ہمیں
بدنام نہ ہوتے تو بے نام ہی مر جاتے

Shakeel Sagar

Shakeel Sagar

شاعر : شکیل ساگر