fbpx

گمان تک نہ تھا

مجھے تو تیرے دھوکے کا گما ن تک نہ تھا
میر ے پاس بچنے کا سامان تک نہ تھا

دل کی دنیا تھی سیل بند۔۔۔۔۔
ہر طرف تھا ہرا ہرا۔۔۔۔۔۔
آ نگن میں کوئی مہمان تک نہ تھا
کہیں کو ئی بیابان تک نہ تھا

ہم اکیلے ہی خوش تھے اپنی دنیا میں
کوئی مہربان تک نہ تھا۔۔۔۔۔

اک تجھ کو اپنا مان کے سبر بط کھو دیئے
اس حادثے کا ہم کو وجدان تک نہ تھا

Deceive

Deceive

تحریر: مسز جمشید خاکوانی