fbpx

لداخ میں آنکھ اٹھا کر دیکھنے والوں کو کرارا جواب دیا، مودی

Narendra Modi

Narendra Modi

بھارت (اصل میڈیا ڈیسک) بھارتی وزیراعظم نریندر مودی نے چین کا نام لیے بغیر کہا ہے کہ ملکی سرزمین پر بری نگاہ ڈالنے والوں کو مناسب جواب دیا جائے گا۔ انہوں نے دبے لفظوں میں چینی مصنوعات کا بائیکاٹ کرنے کی بھی حمایت کی ہے۔

بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی نے اتوار کے روز عوام سے ریڈیو خطاب میں کہا ہے کہ وہ ملکی دفاع کو مضبوط بنانے کی خاطر ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں۔ انہوں نے ایک مرتبہ پھر ماضی کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ آزادی سے پہلے اسلحہ سازی میں بھارت پیش پیش تھا لیکن آزادی کے بعد ملک میں دفاعی پیداوار پر کوئی خاص توجہ نہیں دی گئی اور اب یہ کمی ان کی حکومت پوری کر رہی ہے۔

انہوں نے وادی گلوان کے حوالے سے اپنا موقف پیش کرتے ہوئے کہا کہ لداخ میں بھارتی سرزمین کی طرف آنکھ اٹھا کر دیکھنے والوں کو کرارا جواب دیا گیا۔ یاد رہے کہ لداخ کے مشرق میں واقع وادی گلوان میں چینی فوجیوں کے ساتھ ہاتھا پائی اور ڈنڈوں کی لڑائی میں بیس بھارتی فوجی مارے گئے تھے۔ دفاعی ماہرین کے مطابق چینی فوجی اب بھی اسی علاقے میں موجود ہیں، جہاں سے انہیں بھارتی حکومت اور فوج نکل جانے کا کہہ رہے ہیں۔

بھارتی وزیر اعظم کا چین کا نام لیے بغیر کہا کہ ان کے فوجیوں نے دکھا دیا ہے کہ وہ کبھی بھی بھارت کی عزت پر آنچ نہیں آنے دیں گے، ”بھارت آنکھ میں آنکھ ڈال کر دیکھنا اور مناسب جواب دینا بھی جانتا ہے۔‘‘ انہوں نے یہ بھی کہا کہ لداخ میں ہلاک ہونے والوں پر پورے بھارت کو فخر ہے۔

بھارتی وزیراعظم نے کہا کہ ملک بھر سے انہیں ایسے خطوط مل رہے ہیں، جن میں ان سے وعدہ کیا گیا ہے کہ وہ مقامی سطح پر تیار کردہ مصنوعات ہی خریدیں اور استعمال کریں گے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس نعرے کی مزید ترویج کی جائے گی۔

20 بھارتی فوجیوں کی ہلاکت کے بعد سے سیاسی رہنما قوم پرستی کے نام پر چینی مصنوعات کے بائیکاٹ اور چین کو سبق سکھانے پر زور دے رہے ہیں۔ لیکن ماہرین کے نزدیک یہ سب وقتی جوش سے زیادہ کچھ نہیں کیوں کہ بھارت کی مارکیٹ کا چین پر اتنا انحصار ہے کہ اس سے نجات حاصل کرنا مشکل ہے۔

بھارت ہزاروں مصنوعات اور خام مال کے لیے چین پر انحصار کرتا ہے۔ بھاری مشنری سے لے کر ہر طرح کے ٹیلی کام، پاور آلات اور دوا سازی میں استعمال ہونے والے اجزاء تک کے لیے بھی خام مال اسے چین سے ہی درآمد کرنا پڑتا ہے۔ بھارتی محکمہ کامرس کی رپورٹ کے مطابق چین، امریکا کے بعد بھارت کا دوسرا سب سے بڑا تجارتی پارٹنر ہے۔

نریندر مودی کا کہنا تھا، ”ایک خود انحصار بھارت ہی مارے جانے والے فوجیوں کو خراج عقیدت پیش کرنے کا سب سے بہتر طریقہ ہے۔‘‘