fbpx

یہ ہم جو سب میں تری خو تلاش کرتے ہیں

Sad Girl

Sad Girl

یہ ہم جو سب میں تری خُو تلاش کرتے ہیں
خود اپنے کرب کے پہــــــــلو تلاش کرتے ہیں

وہ قحط ِ اشک ہے اس بار دشت ِ ہجراں میں
سب اپنی آنکھ میں آنســــو تلاش کرتے ہیں

دل ِ تباہ ! چــــــــلو مل کے اس کڑی شب میں
خیال ِ یار کے جُگـــــــــــنو تلاش کرتے ہیں

ہوائے شہر سے پوچھو ہم اُس کے دامن میں
تیرے لباس کی خوشبـــــو تلاش کرتے ہیں

تری تلاش میں نکلے تو ہم نے جانا کـــــــــــہ
خود اپنی ذات کو ہر ســـــــــو تلاش کرتے ہیں

نہ جانے آج بھی کیوں لوگ دل کے صحرا میں
بھٹـــــــک چُکا ہے جو آہو تلاش کرتے ہیں

وہ جن کو باندھ کے رقصاں ہو میری تنہائی
اے بزم ِ یار وہ گھنـــــــــگرو تلاش کرتے ہیں

مرے خیال کی سلمی ، مرے عــــــرب کی حُور !
بس اب تو آ ، تجھے ہر سو تلاش کرتے ہیں

وہ جس کے فیـــــــــــض سے تاریکیاں منوّر ہوں
یہ ہم سفر وہی مــــــــــــہ رُو تلاش کرتے ہیں

جو آ کے ایک انا الحــــق سے ہر فسوں کاٹے
ہم اہل ِ درد وہ ســــــــــادھو تلاش کرتے ہیں

دعائیں خیمہ ِشب میں بھٹکتی ہیں ایـــــــــماں
فرشتے صــــــــدق کا جادو تلاش کرتے ہیں

شاعرہ : ایمان قیصرانی