fbpx

حسن بازار کا تماشا ہے

حسن بازار کا تماشا ہے
بزمِ اغیار کا تماشا ہے
تُو میری ہار کا تماشا ہے
عشق تنہائیوں کا شیدائی
حُسن بازار کا تماشا ہے
اُس کی نفرت چھپائی ہے کب سے
جو میرے پیار کا تماشا ہے
کتنی آسانیوں سے دل میرا
راہِ دشوار کا تماشا ہے
چھپ کے اقرار کرنے والے سُن
وقت انکار کا تماشا ہے
میرے ہونٹوں کی خامشی ساحل
غم کے اظہار کا تماشا ہے

Sahil Munir

Sahil Munir

ساحل منیر