fbpx

’’آواز دے کہاں ہے‘‘ پرائیڈ آف پرفارمنس ملکہ ترنم نور جہاں کی 20ویں برسی

 Tarnam Noor Jahan

Tarnam Noor Jahan

کراچی (اصل میڈیا ڈیسک) ’’آواز دے کہاں ہے‘‘، ’’جس دن سے پیا دل لے گئے‘‘ ، ’’سانوں نہر والے پل تے بلا کے‘‘ اور ہزاروں ہٹ گانے دینے والی فلم انڈسٹری کی معروف گلوکارہ ملکہ ترنم نور جہاں کی20ویں برسی آج منائی جارہی ہے۔

ملکہ ترنم نور جہاں 21ستمبر 1926 کو قصور میں پیدا ہوئیں۔ ان کا اصل نام اللہ وسائی جب کہ نور جہاں ان کا فلمی نام تھا۔ انہوں نے اپنے فنی کیریئر کا آغاز 1935 میں ’’پنڈ دی کڑی‘‘ سے کیا ۔ قیام پاکستان کے بعدوہ اپنے شوہر شوکت حسین رضوی کے ہمراہ ممبئی سے کراچی شفٹ ہو گئیں۔

1965 کی جنگ میں انہوں نے ’’میرے ڈھول سپاہیا‘‘ ، ’’اے وطن کے سجیلے جوانوں‘‘ ، ’’ایہہ پتر ہٹاں تے نیئی وکدے‘‘، ’’او ماہی چھیل چھبیلا‘‘، ’’یہ ہواؤں کے مسافر‘‘ ، ’’رنگ لائے گا شہیدوں کا لہو‘‘، ’’میرا سوہنا شہر قصورنیں‘‘ سمیت بے شمار ملی نغمے گا کر قوم اور فوج کے جوش و ولولہ میں اضافہ کیا۔
ملکہ ترنم نورجہاں نے مجموعی طور پر 10ہزار سے زائد غزلیں و گیت گائے جن میں ان کا سب سے پہلا گانا ’’مجھ سے پہلی سی محبت میرے محبوب نہ مانگ‘‘ بے پنا ہ ہٹ ہوا جس نے ملکہ ترنم کو کامیابیوں کے نئے سفر پر گامزن کر دیا۔

ملکہ ترنم نے کئی فلموں میں کامیاب اداکاری و گلوکاری کے جو ہر دکھائے جن میں ’’ایماندار‘‘، ’’پیام حق‘‘، ’’سجنی‘‘،’’یملا جٹ‘‘ ،’’ چوہدری‘‘ ،’’ ریڈ سگنل‘‘،’’ سسرال‘‘ ، ’’چاندنی‘‘ ، ’’دھیرج‘‘ ، ’’فریاد‘‘، ’’خاندان‘‘، ’’نادان‘‘ ، ’’دہائی‘‘، ’’نوکر‘‘، ’’لال حویلی‘‘ ،’’ دوست‘‘ ، ’’زینت‘‘ ، ’’گاؤں کی گوری‘‘ ، ’’بڑی ماں‘‘ ، ’’بھائی جان‘‘، ’’انمول گھڑی‘‘ ، ’’دل‘‘، ’’ہمجولی‘‘ ، ’’صوفیہ‘‘ ، ’’جادوگر‘‘ ، ’’مرزا صاحباں‘‘ ،’’ انار کلی‘‘ ،’’لخت جگر‘‘ ، ’’پاٹے خان‘‘، ’’چھومنتر‘‘، ’’نیند‘‘ اور ’’کوئل‘‘ وغیرہ شامل ہیں۔

ملکہ ترنم نور جہاں کی فنی خدمات کے اعتراف میں حکومت پاکستان نے انہیں تمغہ امتیاز اور پرائیڈ آف پرفارمنس کے اعزازات سے بھی نوازا۔ برصغیر کی یہ عظیم گلوکارہ 23 دسمبر 2000 کو داغ مفارقت دے گئیں، انھیں کراچی میں سپرد خاک کیا گیا۔