fbpx

صدر ایردوان کا یورپی یونین کی عدالت عالیہ کے مسلمانوں کے حقوق و آزادیوں کو نشانہ بنانے پر رد عمل

Recep Tayyip Erdogan

Recep Tayyip Erdogan

ترکی (اصل میڈیا ڈیسک) صدر رجب طیب ایردوان نے یورپی یونین کی عدالتِ عالیہ کے مسلمانوں کے بنیادی حقوق اور آزادیوں کو نشانہ بنانے پر اپنے شدید ردِ عمل کا اظہار کیا ہے۔

شمالی قبرصی ترک جمہوریہ روانگی سے قبل پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے یورپی یونین کورٹ آف جسٹس کے ہیڈ سکارف فیصلے سے متعلق بیان دیتے ہوئے کہا کہ “خاص طور پر عدالت عظمیٰ کو اپنا نام تبدیل کرنے کی ضرورت ہے۔ اس کا عدالت عظمیٰ سے کوئی تعلق نہیں ہے، عدالت عالیہ کو پہلے عقیدہ کی آزادی کیا ہے، اس بارے میں آگاہی حاصل کرنے کی ضرورت ہے۔

15 جولائی کو ، یورپی عدالت انصاف نے دو خواتین کے معاملے کا فیصلہ کیا جنہیں جرمنی میں ہیڈ سکارف کی وجہ سے ملازمت سے برخاست کردیا گیا تھا ، اور یہ فیصلہ دیا تھا کہ یورپی یونین میں کمپنیاں اپنے ملازمین کو مخصوص شرائط کے تحت ہیڈ سکارف پہننے سے منع کرسکتی ہیں۔

عدالت کی جا نب سے سنائے جانے والے فیصلے کے مطابق “ملازمت کی جگہ پر سیاسی ، فلسفیانہ یا مذہبی عقائد کی کسی بھی علامت کی ممانعت کو آجر کی طرف سے صارفین کے سامنے غیر جانبدار شبیہہ پیش کرنے یا معاشرتی تنازعات کو روکنے کی ضرورت کے ذریعہ جائز قرار دیا جاسکتا ہے۔