fbpx

کوئی پتھر بھی میرا پیار سمجھ سکتا ہے

Stone

Stone

کوئی پتھر بھی میرا پیار سمجھ سکتا ہے
صرف دنیا کے ہی معیار سمجھ سکتا ہے
تو کہاں حالِ دلِ زار سمجھ سکتا ہے
تُو تو انساں ہے سلامت ہیں تیرے قلب و جگر
کوئی پتھر بھی میرا پیار سمجھ سکتا ہے
عشق وہ رازِ ابد ہے کہ جسے دنیا میں
کوئی دیوانہ سرِ دار سمجھ سکتا ہے
یہ جو چہروں پہ ہے افلاس کی تحریر لکھی
کب اسے شہر کا زردار سمجھ سکتا ہے
ہم نے جس طور محبت کا بھرم رکھا ہے
ہاں کوئی صاحبِ کردار سمجھ سکتا ہے
جس کی بنیاد میں شامل ہے چٹانوں کا لہو
تُو اسے ریت کی دیوار سمجھ سکتا ہے
وہ حقیقت جو کسی خواب کا حاصل ٹھہرے
وہ حقیقت کوئی فنکار سمجھ سکتا ہے
ساحل منیر