fbpx

خلائی کچرے کی صفائی کے لیے کروڑوں یورو

ESA

ESA

یورپی خلائی ایجنسی نے ایک نئی کمپنی کو خلائی کچرا صاف کرنے کا کام سونپا ہے، جس کے عوض اسے کروڑوں یورو ادا کیے جائیں گے۔ زمین کے مدار میں سیٹیلائیٹس کے ملبے کے ہزاروں ٹکڑے بکھرے ہوئے ہیں۔

ایک سوئس کمپنی نے یورپی خلائی ادارے ESA کے ساتھ 68 ملین یورو کی ایک ڈیل پر دستخط کیے ہیں، جس کے تحت پہلی بار زمینی خلا کی صفائی کا کام شروع کیا جا رہا ہے۔

کلیئر سپیس نامی کمپنی سن 2025 تک ایک خصوصی سیٹیلائیٹ خلا میں پہنچائے گی، جو زمین کے مدار میں موجود ملنے کے ٹکڑوں کو پکڑے گی۔ یہ بات اہم ہے کہ ہزاروں غیرفعال سیٹلائیٹس اور خلائی راکٹس کے ٹکڑے زمینی خلا میں موجود ہیں۔ یہ ٹکڑے گولی سے بھی تیز رفتار سے خلا میں گھوم رہے ہیں اور وہاں موجود فعال سیٹئلائیٹس حتیٰ کہ بین الاقوامی خلائی اسٹیشن کے لیے بھی ہر لحظہ ایک خطرے کا باعث بن رہے ہیں۔

یورپی خلائی ادارے کے ڈائریکٹر جنرل ژان وؤرنر نے دسمبر میں خلا کی صفائی کے مشن کے اعلان کے موقع پر کہا تھا، ”آپ اس خطرے کا تصور کیجیے کہ ماضی میں سمندروں میں کھو جانے والے جہاز پانی پر تیر رہے ہوں۔‘‘

کلیئر اسپیس کے بانی اور سربراہ نے بھی اس موقع پر خبردار کیا تھا کہ زمین کے قریبی مدار میں ہزاروں غیرفعال سیٹیلائیٹس تیر رہے ہیں اور یہ نئی راکٹس کے لیے یہ انتہائی خطرناک ہو سکتا ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا، ”یہ بالکل یوں ہے کہ انتہائی ٹریفک والے علاقے سے ایک ٹو ٹرک کی مدد سے غیرفعال اور ناکارہ سیٹیلائیٹس کو ہٹایا جائے۔‘‘

بیسویں صدی کے وسط تک خلا میں سیٹیلایٹ چھوڑے جانے سے قبل ہمیں اپنے ماحول سے متعلق بہت کم معلومات تھیں۔ آج ہم جمع ہونے والے ڈیٹا کے ذریعے اپنے بدلتے سیارے کی کہانی سمجھ سکتے ہیں۔ 1985ء میں انہی سیٹیلائیٹس کی مدد سے ہمیں اوزون کی تہہ میں ہوئے چھید سے متعلق معلومات ملی تھی۔

کلیئر اسپیس ون کلین اپ مشن پرانے راکٹوں کے ٹکڑوں کو قریب ایک سو بارہ کلوگرام تک وزنی ملبے کے ٹکڑوں کو چننے کے کام کرے گا۔ اس کے علاوہ ملبے کے چھوٹے ٹکڑے بھی زمینی مدار سے ہٹائے جائیں گے۔ یورپی خلائی ادارے نے اسے ایک اچھا آغاز قرار دیا ہے۔ اس مشن کے لیے یورپی خلائی ایجنسی کلیئر اسپیس کو اس مشن کے لیے اپنی مہارت فراہم کر رہے ہیں جب کہ اس پہلے مشن کے لیے سرمایہ بھی فراہم کر رہی ہے۔