fbpx

دہشت گردی کی مالی معاونت، حافظ سعید کو ساڑھے پانچ سال قید

Hafiz Saeed

Hafiz Saeed

اسلام آباد (اصل میڈیا ڈیسک) پاکستانی صوبہ پنجاب کے محکمہ انسدادِ دہشت گردی نے پچھلے سال حافظ سعید کی جماعت الدعوۃ، لشکرِ طیبہ اور فلاحِ انسانیت فاؤنڈیشن کے مالی معاملات کی چھان بین شروع کی تھی۔

بدھ کو انسداد دہشت گردی کی عدالت کے جج ارشد حسین بھٹہ نے منی لانڈرنگ کے ساتھ ساتھ کالعدم تنظیم چلانے پر حافظ سعید کو سزائے قید سنا دی۔

فیصلے کے مطابق حافظ سعید اور ان کے ساتھی ظفر اقبال پر دہشت گردی کے لیے رقوم جمع کرنے اور ایک کالعدم تنظیم کے ارکان ہونے کے الزامات ثابت ہو گئے تھے۔

عدالت نے لاہور اور گوجرانوالہ میں درج مقدمات میں ان ملزمان کو الگ الگ ساڑھے پانچ برس قید کی سزا سنائی جبکہ ان کو پندرہ پندرہ ہزار روپے جرمانہ بھی کیا گیا ہے۔

حافظ سعید کو یہ سزا ایک ایسے وقت پر سنائی گئی ہے، جب اگلے ہفتے پیرس میں فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کا ایک اہم اجلاس ہونے والا ہے۔ اس اجلاس میں پاکستان کے آئندہ ‘گرے لسٹ’ میں رکھے یا نہ رکھے جانے کا فیصلہ متوقع ہے۔

ایف اے ٹی ایف کا پاکستان پر دباؤ رہا ہے کہ وہ حافظ سعید جیسی شخصیات کے خلاف کارروائی کریں۔ پاکستان نے ماضی میں بھی کئی بار عالمی دباؤ کے تناظر میں حافظ سعید کو گرفتار تو کیا تھا لیکن بعد میں ہر بار متعلقہ اداروں نے انہیں عدم ثبوت کی بنا پر رہا کر دیا تھا۔

پنجاب میں انسدادِ دہشت گردی کے محکمے (سی ٹی ڈی) نے انہیں پچھلے سال 17 جولائی کو گوجرانوالہ سے گرفتار کیا تھا۔

سی ٹی ڈی پنجاب کے مطابق، ”ان تنظیموں نے دہشت گردی کے لیے جمع کیے جانے والے فنڈز سے اثاثے بنائے اور پھر ان سے دہشت گردی کے لیے مزید رقوم جمع کیں۔”