fbpx

عالمی ادارہٴ صحت نے ایسٹرا زینیکا ویکسین کی منظوری دے دی

Astra Zeneca Vaccine

Astra Zeneca Vaccine

جرمنی : ایسٹرا زینیکا ویکسین کی ہنگامی منظوری غریب ممالک کے لیے بہتر اور مناسب اقدام قرار دی گئی ہے۔ اس ویکسین کی منظوری یقینی طور پر کورونا وائرس کی وبا کے خلاف ایک حفاظتی دیوار ثابت ہو سکتی ہے۔

ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کی طرف سے منظوری کے بعد اس بات کا قوی امکان ہے کہ کم اور درمیانی معاشی حالت رکھنے والے ممالک میں بھی کووڈ انیس کی مہلک بیماری کے خلاف مدافعتی ویکسین لگانے کا سلسلہ رواں ماہ کے اختتام پر شروع ہو سکتا ہے۔

امید کی جا رہی ہے کہ غریب ممالک میں کورونا کی وبا کے خلاف ویکسین لگانے کا پروگرام امیر ملکوں میں ویکسینیشن کے سلسلے کی طرح ہی جاری رکھا جائے گا۔

اقوام متحدہ کے صحت کے ادارے کا کہنا ہے کہ رواں برس کے وسط تک تین سو چھتیس ملین خوراکیں مختلف غریب ملکوں کو فراہم کی جائیں گی اور دسمبر کے آخر تک ویکسینیشن میں تسلسل کے لیے فراہم کردہ اس کی خوراکوں کی تعداد دو بلین کے برابر ہو جائے گی۔

بائیو این ٹیک فائزر اور موڈیرنا کی ویکسینوں کے مقابلے میں ایسٹرا زینیکا آکسفورڈ کی تیار کردہ ویکسین خاصی سستی ہے۔ یہ ویکسین برطانیہ کی آکسفورڈ یونیورسٹی اور سویڈش کمپنی ایسٹرا زینیکا نے مشترکہ طور پر تیار کی ہے۔

عالمی ادارہٴ صحت کی جانب سے خریدے جانے کے بعد غریب ملکوں کو ویکسین کی فراہمی عالمی کورونا ویکسینیشن پرگرام یا کوویکس (COVAX) کے تحت کی جائے گی۔ اس پروگرام کے تحت ویکسین صرف ایک کمپنی سے نہیں بلکہ کئی کمپنیوں سے لی جائے گی۔

دیگر کمپنیوں میں سے بائیو این ٹیک فائزر اور موڈیرنا خاص طور پر نمایاں ہیں۔ یہ امر اہم ہے کہ جرمنی میں تیار ہونے والی بائیو این ٹیک فائزر ویکسین کو انتہائی سرد اسٹوریج میں رکھنا لازمی ہوتا ہے ورنہ اس کا اثر زائل ہو سکتا ہے۔

ماہرین کے مطابق کولڈ اسٹوریج کی اس شرط کی بنیاد پر یہ ویکسین غریب ملکوں کے لیے زیادہ فائدہ مند نہیں ہو گی۔ بھارتی دوا ساز ادارہ سیرم انسیٹیوٹ ایسٹرا زینیکا ویکسین تیار کرنے کی اجازت لے چکا ہے اور وہ بڑی مقدار میں یہ ویکسین مرکزی ادارے کے لیے تیار کر رہا ہے۔ کوویکس پروگرام کے لیے یہ بھارتی ادارہ 1.1 بلین خوراکیں فراہم کرے گا۔

اقوام متحدہ کے بچوں کے امدادی ادارے نے بھی ماہانہ بنیادوں پر ساڑھے آٹھ سو میٹرک ٹن خوراکیں خریدنے کی منصوبہ بندی کی ہے۔ اس ادارے نے اس مقصد کے لیے چھ بلین ڈالر (تقریباﹰ پانچ بلین یورو) کی خطیر رقم جمع کر رکھی ہے۔ اس ادارے کے مطابق اپنے ہدف کے حصول کے لیے اسے ابھی مزید دو بلین ڈالر درکار ہیں۔

کوویکس پروگرام کے لیے کئی امیر ممالک بھی اپنا حصہ ڈالنے کے لیے رضامند ہیں۔ متعدد امیر ممالک ویکسین تیار کرنے والے اداروں سے براہِ راست خریداری کا سلسلہ بھی جاری رکھے ہوئے ہیں۔ ان میں سے ایک جنوبی کوریا بھی ہے، جو ڈھائی ملین سے زائد خوراکیں خریدے گا۔پاکستانی لیبارٹری کو روسی کووڈ ویکسین کمرشل فروخت کے لیے جلد فراہم کی جائے گی

کوویکس نامی پروگرام کی بنیاد ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن نے جون سن 2020 میں رکھی تھی۔ ابھی مختلف ادارے ویکسینز بنانے میں مصروف تھے۔ اس پروگرام میں دیگر بین الاقوامی ادارے بھی شامل ہیں۔ ان میں گاوی ویکسین الائنس اور متعدی امراض کی روک تھام کا ادارہ سی ای پی آئی (CEPI) نمایاں ہیں۔

اس پروگروم میں ایک سو اٹھانوے ممالک شامل ہیں۔ تاہم امیر ممالک یہ ویکسین خود خریدیں گے اور بانوے غریب ملکوں کو یہ ویکسین بطور عطیہ دی جائے گی۔ ان ممالک میں سے کئی ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کی طرف سے ویکسینز کی باضابطہ منظوری پر تکیہ کیے ہوئے ہیں۔