fbpx

اقبال کون؟

میں نے کبھی اپنے آپ کو شاعر نہیں سمجھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فن شاعری سے مجھے کوئی دلچسپی نہیں رہی، ہاں بعض مقاصد خاص رکھتا ہوں جن کے بیان کے لیے حالات و روایات کی رو سے میں نے نظم کا طریقہ اختیار کر لیا ہے ورنہ
نہ بینی خیر ازاں مرد فرو دست
کہ برمن تہمت شعر و سخن بست
( اقبال رحمہ اللہ تعالیٰ)

allama iqbal aur shaheen

allama iqbal aur shaheen

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خراج عقیدت
شعرا قوم میں جان پیدا کرتے ہیں، ملٹن شکسپئیر بائرن وغیرہ نے قوم کی بے بہا خدمت کی ہے۔ کار لائل نے شکسپئیر کی عظمت کا ذکر کرتے ہوئے ایک انگریز کا ذکر کیا ہے۔
اسے جب شکسپئیر اور دولت برطانیہ میں سے کسی ایک کو منتخب کرنے کا اختیار دیا گیا تو اس نے کہا میں شکسپئیر کو کسی قیمت پر نہ دوں گا۔ گو میرے پاس سلطنت نہیں ہے لیکن اگر سلطنت مل جائے اور اقبال رحمہ اللہ تعالی ٰاور سلطنت میں سے کسی ایک کو منتخب کرنے کی نوبت آئے تو میں اقبال رحمہ اللہ تعالیٰکو منتخب کروں گا۔

( قائد اعظم رحمہ اللہ تعالی)ٰ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اقبال رحمہ اللہ تعالی ٰکی ادبی شخصیت عالمگیر ہے۔ وہ بڑے ادیب، بلند پایہ شاعر اور مفکر اعظم تھے لیکن اس حقیقت کو میں سمجھتا ہوں کہ وہ ایک بہت بڑے سیاستدان بھی تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مرحوم دور حاضر میں اسلام کے بہترین شارح تھے کیونکہ اس زمانے میں اقبال رحمہ اللہ تعالی ٰسے بہتر اسلام کو کسی نے نہیں سمجھا۔ مجھے اس امر کا فخر حاصل ہے کہ ان کی قیادت میں ایک سپاہی کی حیثیت سے کام کرنے کا مجھے موقع مل چکا ہے۔ میں نے ان سے زیادہ وفادار رفیق اور اسلام کا شیدائی نہیں دیکھا۔

( قائد اعظم رحمہ اللہ تعالیٰ )
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اقبال رحمہ اللہ تعالی ٰکی شاعری نے نوجوان مسلمانوں میں بیداری پیدا کر دی ہے اور بعض نے یہاں تک کہہ دیا ہے کہ جس مسیحا کا انتظار تھا وہ آ گیا ہے۔

( نکلسن)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہندوستان میں حرکت تجدید نے اپنا ممتاز ترین ظہور سر محمد اقبال رحمہ اللہ تعالی ٰکی شاعری میں حاصل کیا ہے۔
( سرطامس آرنلڈ، برطانیہ )
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاید بہت کم لوگوں کو معلوم ہو کہ ڈاکٹر اقبال رحمہ اللہ تعالی ٰمرحوم ایک صوفی خاندان میں پیدا ہوئے تھے۔ انکے والد مرحوم ایک خوش اوقات صوفی صافی تھے اور انکے ہاں آنیوالے دوستوں کو مذاق بھی یہی تھا اور اسی ماحول میں اقبال رحمہ اللہ تعالیٰ کی پرورش ہوئی۔
(سید سلمان ندوی، پاکستان)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
در دیدہ معنی نگہباں حضرت اقبال
پیغمبر ئیے کرد و پیمبر نتواں گفت
مولانا غلام قادر گرامی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہندوستان کے اردو دانوں کی زبان پر آجکل اقبال رحمہ اللہ تعالیٰ کا ہی چرچا ہے۔
( قاضی نذر الاسلام، بنگلہ دیش)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
محمد اقبال رحمہ اللہ تعالیٰ ہمارے عہد میں اسلامی فکر اور انسانی و بین المللی اسلامی بصیرت کے مظہر ہیں۔ میں جب بھی اقبال رحمہ اللہ تعالی ٰکے بارے میں سوچتا ہوں، میں ان کو ” علی گو نہ ” ( علی نما ) پاتا ہوں یعنی ایک ایسا انسان جو علی علیہ السلام کی سنت کا پیرو ہے لیکن وہ انسان بیسویں صدی کی انسانی استعداد کے کیف و کم کا بھی مکمل نمونہ ہے۔
(ڈاکٹر علی شریعتی، ایران)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بید لے گر رفت اقبالے رسید
بیدلاں رانوبت ھالے رسید
قرن حاضر خاصہ اقبال رحمہ اللہ تعالیٰگشت
واحدے کز صد ہزاراں برگزشت
این سلامے جی فرستم سوئے یار
بے ریا تر از نسیم نو بہار
( ملک الشعرا بہار، ایران )
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اقبال رحمہ اللہ تعالی ٰہمارے لیے مسیحا بن کر آیا ہے اور اس نے مردوں میں زندگی کی لہر دوڑا دی ہے۔
( شمس العلماء ڈاکٹر عبدالرحمٰن بجنوری)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ باوجود اتنا بڑا مشہور شاعر ہونے کے شاعر نہیں ہے بلکہ اپنے پیام سے مقام نبوت کی جانشینی کا حق ادا کر رہا ہے۔ مبارک ہیں وہ ہستیاں جو اقبال رحمہ اللہ تعالی ٰشناس ہو جائیں۔
(مولانا عبدالماجد دریا آبادی)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاعری میں مابعد الطبیعاتی صداقتوں کے معیار پر اگر آج کے اپنے شعراء کی پرکھ کی جائے تو مجھے صرف ایک ہی زندہ شاعر نظر آتا ہے جو کم عیار ثابت نہ ہو گا اور یہ بھی طے ہے کہ وہ ہمارے عقیدے اور نسل کا شاعر بھی نہیں ہے، میری مراد محمد اقبال رحمہ اللہ تعالی ٰسے ہے۔
(سرہربرٹ ریڈ، 1921ئ)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اقبال رحمہ اللہ تعالیٰ کی شاعری کی خاص غایت تھی۔ مولانا حالی رحمہ اللہ تعالیٰ کی طرح اقبال رحمہ اللہ تعالیٰ نے بھی اپنی شاعری سے قوم اور ملک کو جگانے اور رہنمائی کا کام لیا۔ یہ اس کے خیال اور فکر کی قوت اور جدت تھی، جس نے اسکے کلام اور طرز بیان میں زور اور جوش پیدا کر دیا۔
( نکولائی گلیبوف، روس)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اقبال رحمہ اللہ تعالیٰ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ایک شاعر، جس نے زمانے پر اپنا سکہ بٹھا دیا۔
(ڈاکٹر طٰہٰ حسین، مصر)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صرف سرزمین پاکستان کے لیے نہیں بلکہ ساتھ ہی ساتھ آزادی وطن پرستی اور فضیلت کیلئے کوشاں تمام مسلمانوں اور انسانوں کی خدمت کرنے والے مفکر شاعر اقبال رحمہ اللہ تعالیٰ ہیں۔
(ڈاکٹر عبدالقادر کراحان، ترکی)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اقبال رحمہ اللہ تعالیٰ کا سارا کلام پڑھنے کے بعد ایک سیدھی سادھی بات جو ایک عامی کی سمجھ میں آتی ہے وہ یہ ہے کہ انسان اپنی صلاحیتوں اور قوتوں کو پہچانے اور ان سے کام لے۔ خدا اور اسکے رسول صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلم سے عشق رکھے۔ اسلامی تعلیمات کی حر کی روح کو سمجھے اور اس پر عمل کرے تو وہ حقیقت میں خدا کا جانشین بن سکتا ہے اور اپنی تقدیر کا آپ مالک بن سکتا ہے۔
(عزیر احمد)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم اقبال رحمہ اللہ تعالیٰ کو عہد جدید کا زبردست مفکر اسلامی، مجدد ملت اور اسلامی انقلاب کا سب بڑا داعی کہتے ہیں۔
(مولانا سعید احمد اکبر آبادی)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈاکٹر اقبال رحمہ اللہ تعالیٰ اپنی وفات سے ہمارے ادب میں ایسی جگہ خالی کر گئے ہیں جس کا گھاؤ مدت مدید میں بھی مندمل نہیں ہو سکتا۔ ہندوستان کا رتبہ آج دنیا میں اتنا کم پایہ ہے کہ ہم کسی حالت میں ایسے شاعر کی کمی برداشت نہیں کر سکتے جس کے کلام نے عالمگیر مقبولیت حاصل کر لی ہو۔
(رابندر ناتھ ٹیگور، بھارت)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگر جلال الدین رومی رحمہ اللہ تعالیٰ اس زمانے میں جی اٹھیں تو وہ محمد اقبال رحمہ اللہ تعالیٰ ہی ہونگے۔ ساتویں صدی کے جلال رحمہ اللہ تعالیٰ اور چودہویں صدی کے اقبال رحمہ اللہ تعالیٰ کو ایک ہی سمجھنا چاہیے۔
(ڈاکٹر عبدالوہاب عزام، مصر)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ بھی ہمارے شہنشاہانہ طرز حکومت کا ایک کرشمہ ہے کہ اقبال رحمہ اللہ تعالیٰ جیسا شاعر جسکا نام گزشتہ دس برس سے اسکے ہم وطن مسلمانان ہند میں بچے بچے کی زبان پر ہے۔ اسکے کلام کا ترجمہ اس قدر عرصے کے بعد جا کر ہماری زبان میں ہو سکے۔ ہندوؤں میں جو مرتبہ ٹیگور کو حاصل ہے وہی مسلمانوں میں اقبال رحمہ اللہ تعالیٰ کو ہے اور زیادہ صحیح طور پر ہے۔ اس لیے کہ ٹیگور کو بنگال سے باہر اسوقت تک کسی نے نہ پوچھا جب تک وہ یورپ جا کر نوبل پرائز نہ حاصل کر لائے۔ برخلاف اسکے اقبال رحمہ اللہ تعالی کی شہرت یورپ کی اعانت سے بالکل مستثنیٰ ہے۔
ایم ایم فاسٹر، 1920ء

Alama Iqbal

Alama Iqbal

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔