fbpx
وہ بظاہر جو زمانے سے خفا لگتا ہے
اُجڑے ہوئے لوگوں سے گریزاں نہ ہوا کر
شکستہ آئینوں کی کرچیاں اچھی نہیں لگتیں
نئی طرح سے نبھانے کی دل نے ٹھانی ہے
متاع شامِ سفر بستیوں میں چھوڑ آئے
معرکہ اب کے ہوا بھی تو پھر ایسا ہو گا
میں دل پہ جبر کروں گا، تجھے بھلا دوں گا
کھنڈر آنکھوں میں غم آباد کرنا
خلوت میں کھلا ہم پہ کہ بیباک تھی وہ بھی
کاش ہم کھل کے زندگی کرتے
کڑے سفر میں اگر راستہ بدلنا تھا
وہ لڑکی بھی ایک عجیب پہیلی تھی
وہ دلاور جو سیہ شب کے شکاری نکلے
شامل مرا دشمن صفِ یاراں میں رہے گا
ہر ایک زخم کا چہرہ گلاب جیسا ہے
ہر نفس رنج کا اشارہ ہے
اتنی مدت بعد ملے ہو!
گُم صُم ہوا، آواز کا دریا تھا جو اک شخص
فلک پر اک ستارہ رہ گیا ہے
چہرے پڑھتا، آنکھیں لکھتا رہتا ہوں
چمن میں جب بھی صبا کو گلاب پوچھتے ہیں
چاہت کا رنگ تھا نہ وفا کی لکیر تھی
بچھڑ کے مجھ سے کبھی تو نے یہ بھی سوچا ہے
آندھی چلی تو دھوپ کی سانسیں الٹ گئیں
Page 1 of 212