fbpx
اے دلِ بے قرار چپ ہو جا
مانا وادئی عشق میں پائوں اندھا رکھنا پڑتا ہے
کس کو بھاتی رہی رات بھر چاندنی
پھول چاہے تھے مگر ہاتھ میں آئے پتھر
جو حادثے یہ جہاں میرے نام کرتا ہے
تری دنیا میں یا رب زیست کے سامان جلتے ہیں
آنکھ روشن ہے جیب خالی ہے
آج روٹھے ہوئے ساجن کو بہت یاد کیا