fbpx
وہ دلنواز ہے لیکن نظر شناس نہیں
ٹھھرا تھا وہ گلعذار کچھ دیر
سفر منزلِ شب یاد نہیں
نئے کپڑے بدل کر جائوں کہاں
نیت شوق بھر نہ جائے کہیں
کون اس راہ سے گزرتا ہے
جرم انکار کی سزا ہی دے
عشق میں جیت ہوئی یا مات
عشق جب زمزمہ پیدا ہو گا
گئے دنوں کا سراغ لے کر
غم ہے یا خوشی ہے تو
دکھ کے لہر نے چھیڑا ہو گا
دل میں اک لہر سے اٹھی ہے ابھی
دیکھ محبت کا دستور
اپنی دھن میں رہتا ہوں
آج تو بے سبب اداس ہے جی