fbpx
وہ اپنے آپ سے بھی جدا چاہیے ہمیں
کفِ سفیدِ سرِ ساحلِ تمنا ہے
سزا
تمہاری یاد سے جب ہم گزرنے لگتے ہیں
تم حقیقت نہیں ہو حسرت ہو
ہم آندھیوں کے بَن میں کسی کارواں کے تھے
سارے رشتے بھلائے جائیں گے
جو زندگی بچی ہے اسے مت گنوائیے
ایک آفت ہے وہ پیالئہ ناف
ابھی فرمان آیا ہے وہاں سے
بہت دل کو کشادہ کر لیا کیا
بے قراری سی بے قراری ہے
حسرتِ رنگ آئی تھی دل کو لگا کے لے گئی
غم ہائے روزگار میں الجھا ہوا ہوں میں
کبھی جب مدتوں کے بعد اس کا سامنا ہو گا
مستئی حال کبھی تھی کہ نہ تھی بھول گئے
دل کے ارمان مرتے مرتے جاتے ہیں
مہک اٹھا ہے آنگن اس خبر سے
بنامِ فارہہ
گزر آیا میں چل کے خود پر سے
ایک ہی مژدہ صبح لاتی ہے
ہم کہاں تھے اور تم کہاں جاناں
ہم کو سودا تھا سر کے مان میں تھے
ہے فصلیں اُٹھا رہا مجھ میں
Page 1 of 212