fbpx
عکس اور میں
خدا وندانِ جمہور سے
ہمارا دَور
چوٹ ہر گام پہ کھا کر جانا
رعنائی نگاہ کو قالب میں ڈھالیے
وہ سامنے تھا پھر بھی کہاں سامنا ہوا
آگ کے درمیان سے نکلا
اُتر گیا تنِِ نازک سے پتیوں کا لباس
اتریں عجیب روشنیاں، رات خواب میں
کیا کہیے کہ اب اُس کی صدا تک نہیں آتی
عشق پیشہ نہ رہے داد کے حقدار یہاں
اس بُتکدے میں تُوجوحسیں تر لگا مجھے
خاموشی بول اٹھے، ہر نظر پیغام ہو جائے
پھر سن رہا تھا گزرے زمانے کی چاپ کو
وہاں کی روشنیوں نے بھی ظلم ڈھائے بہت
میں شاخ سے اڑا تھا ستاروں کی آس میں
جہاں تلک یہ صحرا دکھائی دیتا ہے
کنارے آب کھڑا خود سے کہہ رہا ہے کوئی
خزاں کےچاند نے پوچھا یہ جھک کےکھڑکی میں
وہی جھکی ہوئی بیلیں، وہی دریچہ تھا
شفق جو روئے سحر پر گلال ملنے لگی
آ کے پتھر تو مرے صحن میں دو چار گرے