fbpx

حجاب کی باتیں

بہت ساری کہانیاں اور فلمیں ایسی پڑھیں اور دیکھیں جن میں زندگی کے کچھ خاص دنوں کا ذکر ہوتا ہے جیسے ، وہ سات دن ۔۔ تیرہ دن یا ایسے ہی کچھ ۔۔۔ میری زندگی میں بھی ایسے ہی تین دن پہلی بار آئے جو ہمیشہ یاد رہیں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

3 days

3 days

30 مارچ کی رات ہاضمہ ذرا گڑبڑ اور بخار محسوس ہوا رات بے چینی میں جاگتے گزری ۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 31 مارچ کی صبح رات بھر کی بے چینی قے کی صورت باہر آئی اور دن بھر بخار کے علاوہ سب ٹھیک ہی رہا ۔۔

رات کو بھائی سے کہا آفس سے واپسی پر ڈاکٹر سے میری دوا لے آنا بخار کی ۔۔۔۔۔۔۔۔ بھائی نے مجھے دوا لا کر دی میں نے ایک چپاتی کھائی اور دوا کھا لی ۔۔۔۔۔۔۔۔ 5 منٹ بعد بے چینی شروع ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کمرے سے نکل کے صحن میں آئی کے شائد قے ہوجائے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔ پھر کمرے میں جا کے کارپٹ پہ بیٹھی اور دنیا اندھیر لگنے لگی ۔

بھائی نے بی۔ پی چیک کیا تو ایرر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس کے بعد جو کچھ کھایا تھا وہیں کارپٹ کی نظر کردیا ، دوبارہ بی ۔ پی چیک پر 40/80 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سن رہی تھی سب کو دیکھنا مشکل تھا پتہ نہیں کیا کیا منہ میں ڈالا گیا یاد نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

blood pressure

blood pressure

چھوٹے بھائی نے منہ کھول کے نمک ڈالا تو کڑواہٹ سے ذرا سا ہوش آیا بھائی نے کہا چلو اٹھو ہاسپٹل ۔۔۔ میں نے کہا میں نہیں جا رہی مت لے جاؤ، سونے دو ٹھیک ہو جاؤں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مگر زبردستی کھڑا کیا گیا تو میری فرمائش ہوئی میری چپل دو دوسری والی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ گھر میں پہننے والی چپل میں کبھی باہر پہن کر نہیں جاتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بقول بھائی کے اس کو اس حال میں بھی چپل یاد رہی ) دوسری فرمائش ایمبولینس پر نہیں جانا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

راستے بھر تھپڑ مار مار کے جگاتے رہے مجھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہاسپٹل پہنچ کے چلنا مشکل ۔۔۔ وہیل چیئر پر اندر گئی۔

اس کے بعد جو کچھ ہوا وہ سنائی دیتا رہا اور دھندلا سا نظر بھی آیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بقول ڈاکٹر گیسٹرو تشخیص ہوا اور ساتھ بی ۔ پی بڑھانے کے لیئے اقدامات کی گئیں جو 2 اپریل کی صبح نارمل ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ڈرپ نے ہاتھ زخمی کیے اور دوسری طرف کمزوری نے بن پیے لڑکھڑانے پر مجبور کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

2 دن تو ہوش ٹھکانے نہیں تھے گھر والے جاگتے رہے تیسری رات مجھے نیند نہیں آئی تو جائزہ لیا کمرے کا کہ جہاں بیڈ ہے اس طرف بڑی بڑی 2 کھڑکیاں ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سوچا کہ کہیں کھلی نہ رہ گئی ہوں اور کوئی ہاتھ اندر آئے تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اس کے بعد خیال آیا واش روم کا دروازہ کھلا ہے کہیں چوہا نہ آتا ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تیسرا خیال خوفناک کہانیوں کا آیا جس میں ہاسپٹل کے کسی خالی کمرے کا ذکر ہوتا ہے کسی اور مخلوق کا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پھر سوچا یہ کیا سوچ رہی ہوں یہی حال رہا تو نیند مشکل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جلدی جلدی
درود شریف پڑھ کے سونے کی کوشش کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

hospital

hospital

صبح دن کی روشنی میں کمرہ دیوار پہ گرد کی ہلکی سی تہہ نظر آئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ امی سے کہا دیواریں صاف نہیں ہوتیں لگتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ امی نے کہا ڈاکٹر صاحب سے کہہ کے ٹھیکہ لے لو آ کے صاف کر جایا کرو۔

ڈاکٹرز اور میل نرس جو بھی آئے ان سے اچھی بات ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔ فی میل نرس مغرور حسینائیں بات نہیں کرتیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نیٹ کے متعلق بھی بات ہوئی مگر دھیان نہیں رہا کہ بلاگ کا پتہ ہی تھما آتی سب کو۔

اللہ کا شکر ہے کہ اب میں ٹھیک ہوں اور کچھ دن میں ٹھیک ٹھاک ہو جاؤں گی، انشا اللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ختم شد