fbpx

میزائل کا فائر ہونا حادثہ تھا جس پر افسوس ہے، بھارتی حکومت

Missile

Missile

نئی دہلی (اصل میڈیا ڈیسک) پاکستانی علاقے میں ایک بھارتی میزائل کے گرنے کے واقعے پر اسلام آباد نے نئی دہلی سے اس واقعے کی وضاحت طلب کی تھی۔ نئی دہلی نے اس واقعے پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے اسے ایک حادثہ قرار دیا ہے۔

پاکستانی علاقے میاں چنوں میں ایک بھارتی میزائل کے گرنے کے واقعے پر نئی دہلی حکام نے افسوس کا اظہار کیا ہے۔ بھارت کی جانب سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا کہ یہ واقعہ ایک تکنیکی خرابی کی وجہ سے رونما ہوا۔
بھارتی موقف

بھارتی بیان کے مطابق نو مارچ 2022ء کے روز معمول کی نگرانی جاری تھی کہ اس دوران تکنیکی خرابی کی وجہ سے حادثاتی طور پر ایک میزائل فائر ہو گیا۔ بیان میں مزید بتایا گیا کہ بھارتی حکومت اس واقعے کی سنجیدگی کو سمجھتی ہے اور اسے لیے اس نے اعلیٰ سطحی تحقیقات کا حکم دے دیا ہے، ”معلوم ہوا ہے کہ یہ میزائل پاکستان کے ایک علاقے میں گرا۔ یہ ایک انتہائی افسوس ناک واقعہ ہے۔ تاہم یہ سن کر اطمینان بھی ہوا کہ اس حادثے میں کسی قسم کا کوئی جانی نقصان نہیں ہوا۔‘‘

پاکستانی الزام

پاکستان نے الزام عائد کیا تھا کہ بھارت نے مبینہ طور پر اس کے فضائی حدودکی خلاف ورزی کرتے ہوئے ملکی علاقے میں ایک سپرسونک میزائل گرایا۔ پاکستانی دعوے کے بعد بھارت نے کشمیر میں لائن آف کنٹرول پر مسلح افواج کو الرٹ کر دیا ہے۔
وضاحت طلب

پاکستان فوج کے ترجمان میجر جنرل بابر افتخار نے جمعرات کو ایک پریس کانفرنس میں بتایا تھا کہ نو مارچ کو چھ بج کر 33 منٹ پر بھارتی حدود سے ایک ‘شے‘ نے پاکستان کی فضائی حدود کی خلاف ورزی کی۔ ان کے مطابق اس بھارتی مشکوک ‘شے‘ کو پاکستانی صوبہ پنجاب کے شہر میاں چنوں کے قریب مار گرایا گیا۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ بھارت بتائے کہ وہاں کیا ہوا اور کس مقصد کے لیے یہ خلاف ورزی کی گئی؟
بھارتی ناظم الامور کی طلبی

اس واقعے کے بعد پاکستانی دفتر خارجہ نے اسلام آباد میں تعینات بھارت کے ناظم الامور کو طلب کیا اور ان سے بھارت کے اس اقدام پر شدید احتجاج بھی کیا۔ پاکستان دفتر خارجہ کے مطابق بھارتی ناظم الامور کوبتایا گیا کہ وہ بین الاقوامی اصولوں اور ایوی ایشن سیفٹی پروٹوکول کے برعکس فضائی حدود کی اس صریح خلاف ورزی پر پاکستان کے تحفظات بھارتی حکومت تک پہنچائیں، ”اس طرح کے غیر ذمہ دارانہ واقعات بھارت کی جانب سے فضائی سلامتی کو نظر انداز کرنے اور علاقائی امن و استحکام کے حوالے سے بے حسی کے بھی عکاس ہیں۔‘‘

اسلام آباد میں ملکی دفتر خارجہ نے اس واقعے کی مکمل اور شفاف تحقیقات کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ بھارت اس چھان بین کے نتائج سے پاکستان کو بھی آگاہ کرے۔