fbpx

وہ جو ہمرہی کا غرور تھا، وہ سوادِ راہ میں جل بجھا

Lovers Once upon a time

Lovers Once upon a time

وہ جو ہمرہی کا غرور تھا، وہ سوادِ راہ میں جل بجھا
تو ہوا کے عشق میں گھل گیا میں زمیں کی چاہ میں جل بجھا

یہ جو شاخ لب پہ ہجوم رنگ صدا کھلا ہے گلی گلی
کہیں کوئی شعلہ بے نوا کسی قتل گاہ میں جل بجھا

جو کتابِ عشق کے باب تھے تری دسترس میں بکھر گئے
وہ جو عہد نامئہ خواب تھا، وہ مری نگاہ میں جل بجھے

ہمیں یاد ہو تو سنائیں بھی ذرا دھیان ہوتو بتائیں بھی
کہ وہ دل جو محرم راز تھا کہاں رسم و راہ میں جل بجھا

کہیں بے نیازی کی لاگ میں کہیں احتیاط کی آگ میں
تجھے میری کوئی خبر بھی ہے مرے خیر خواہ میں جل بجھا

مری راکھ سے نئی روشنی کی حکایتوں کو سمیٹ لے
میں چراغِ صبحِ وصال تھا تری خیمہ گاہ میں جل بجھا

وہ جو حرف تازہ مثال تھے انہیں جب سے تو نے بھلا دیا
تری بزم ناز کا بانکپن کسی خانقاہ میں جل بجھے

سلیم کوثر