fbpx

ہر نفس رنج کا اشارہ ہے

Mohsin naqvi

Mohsin naqvi

ہر نفس رنج کا اشارہ ہے۔۔۔۔۔۔۔!
آدمی دُکھ کا استعارہ ہے ۔۔۔۔۔۔!

مجھ کو اپنی حدوں میں رہنے دے
میں سمندر ہوں تو کنارا ہے

اجنبی! شب کو راستہ نہ بدل
تو میری صبح کا ستارا ہے

یا سماعت کی خود فریبی تھی
یا تری یاد نے پکارا ہے

شامِ شب خوں نے دشت سے پوچھا
کس نے رختِ سفر اتارا ہے

جانے کیوں سوگوار۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سناٹا
موت کی زندگی سے پیارا ہے

عمر بھر بے چراغ رستوں میں
زندگی نے ہمیں گزارا ہے

چاہتوں کی بساط پر محسن
دل بڑی مشکلوں سے ہارا ہے

محسن نقوی