fbpx

غزل

Sahil Munir

Sahil Munir

کہنے کو کوئی بات ادھر بھی ہے ادھر بھی
لہجے میں چھپی مات ادھر بھی ہے ادھر بھی
اب کون کرے درد و اذیت کا مداوا
محرومیء حالات ادھر بھی ہے ادھر بھی
دیوارودرِ دل سے ہیں تاریکیاں لپٹی
گو تاروں بھری رات ادھر بھی ہے ادھر بھی
سرحد پہ لگی باڑ یہ دیتی ہے دہائی
اِک رسمِ فسادات ادھربھی ہے ادھر بھی
ہرشخص کے ملبوس پہ افلاس کے پیوند
یہ کیسی مساوات ادھربھی ہے ادھر بھی
ہونٹوں پہ جمی پیاس کی شدت سے الجھتی
آنکھوں میں یہ برسات ادھر بھی ہے ادھر بھی
ہوجائیں کبھی پورے یہ ارمانِ محبت
اب شوقِ ملاقات ادھر بھی ہے ادھر بھی

ساحل منیر