fbpx

کورونا وائرس: جرمنی میں نئے کیسز میں ریکارڈ اضافہ، پیرس میں کرفیو نافذ

Coronavirus

Coronavirus

جرمنی (اصل میڈیا ڈیسک) جرمنی میں جمعرات کے روز کورونا وائرس کے6638 نئے کیسزکے ساتھ اب تک کا ریکارڈ اضافہ درج کیا گیا۔ دوسری طرف اس وبا کی ممکنہ دوسری لہر کے مدنظر پیرس سمیت فرانس کے نوشہروں میں کرفیو نافذ کردیا گیا ہے۔

کورونا پر نگاہ رکھنے والے جرمن ادارے رابرٹ کوخ انسٹی ٹیوٹ کی طرف سے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق جرمنی میں جمعرات کے روز 6638 نئے کیسز سامنے آئے، جو گزشتہ مار چ کے بعد سے کسی ایک دن میں اب تک کی سب سے بڑی تعداد ہے۔ اس کے ساتھ ہی جرمنی میں کورونا سے متاثر ہونے والوں کی مجموعی تعداد بڑھ کر 341223 ہوگئی ہے۔

جرمنی میں 28 مارچ کو ایک دن میں سب سے زیادہ 6294 نئے کیسز درج کیے گئے تھے۔ کورونا سے مزید 33 اموات ہوئی ہیں جس کے ساتھ اس وبا سے جرمنی میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد 9710 ہوگئی ہے۔

حالانکہ یورپی معیار کے مطابق جرمنی میں اس وبا کا اثر نسبتاً کم رہا اور اموات کی شرح بھی کم رہی ہے، تاہم حالیہ ہفتوں کے دوران یومیہ نئے کیسز میں اضافہ ہوا ہے جس کی وجہ سے انفیکشن کی سطح اس مقام پر پہنچ گئی ہے جہاں یہ وبا کے آغا ز کے دوران بھی نہیں تھی۔

کورونا کے نئے کیسز میں تشویش ناک اضافے کی خبر ایسے وقت آئی، جب چند گھنٹے ہی قبل چانسلر انگیلا میرکل نے جرمنی کی 16وفاقی ریاستوں کے وزرائے اعظم سے ملاقات کی اور وائرس کے پھیلنے کی رفتار کو کم کرنے کے مقصد سے سخت اقدامات پر تبادلہ خیال کیا تھا۔

انگیلا میرکل نے متنبہ کیا کہ اگر موجودہ رجحان برقرار رہا تو یومیہ نئے کیسز کی تعداد 1900سے زیادہ ہوسکتی ہے۔

جرمنی کے رہنماؤں نے بدھ کے روز نئے اقدامات کے تحت مئے خانوں اور ریستورانوں میں کرفیو نیز عوامی اور نجی محفلوں میں لوگوں کے جمع ہونے کی تعداد کو محدود کرنے کے حوالے سے نئی پابندیوں کا اعلان کیا ہے۔ نئے اقدامات کے مطابق اب نجی محفلوں میں زیادہ سے زیادہ 10 لوگوں کے اکٹھے ہونے کی اجازت ہوگی۔

انگیلا میرکل نے نوجوانوں سے اپیل کی کہ وہ کورونا کے کیسز میں مزید اضافہ کو روکنے کے لیے تقریبات منعقد کرنے سے پرہیز کریں۔ انہوں نے کہا ”ہم بالخصوص نوجوانوں سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ کل اور مستقبل میں اچھی زندگی کے لیے فی الحال پارٹیاں نہ کریں۔”

جرمن ریاست باویریا کے وزیر اعظم مارکوس سود ر نے اسی میٹنگ میں متنبہ کیا کہ جرمنی میں دوسرا لاک ڈاون ہوسکتا ہے۔ ان کا کہنا تھا ”ہم دوسرے لاک ڈاون کے بارے میں جتنا سوچ رہے تھے اس سے کہیں زیادہ قریب پہنچ گئے ہیں۔”

فرانسیسی صدر ایمانوئل ماکروں نے پیرس اور آٹھ دیگر شہروں میں رات کے کرفیو کا اعلان کیا ۔

پیرس میں رات کا کرفیو
فرانسیسی صدر ایمانوئل ماکروں نے کورونا وائرس کی دوسری لہر سے بچنے کے لیے پیرس، مارسیلے اور سات دیگر شہروں میں رات کے کرفیو کا اعلان کیا ہے۔ حکومت نے کووڈ۔19کے حوالے سے ہیلتھ ایمرجنسی دوبارہ بحال کرنے کا بھی فیصلہ کیا ہے۔

ماکروں نے قومی ٹیلی ویزن پر خطاب کرتے ہوئے کہا”ہمیں کارروائی کرنی ہوگی۔ ہمیں وائرس کو پھیلنے سے روک لگانے کی ضرور ت ہے۔”

یہ کرفیو ہفتے کے روز سے نافذ العمل ہوجائے گا اور اگلے کم از کم چار ہفتوں تک برقرار رہے گا۔ کرفیو کے دوران رات نو بجے سے صبح کے چھ بجے کے درمیان پیرس اور آٹھ دیگر شہروں میں لوگوں کے گھروں سے نکلنے پر پابندی ہوگی۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ لوگ ریستورانوں میں نہیں جاسکیں گے۔ فرانسیسی حکام کا کہنا ہے کہ اس ضابطے کی خلاف ورزی کرنے پر 135یورو یا 159 ڈالر جرمانہ ادا کرنا پڑے گا۔

ان نئے اقدامات کا مقصد فرانس میں کورونا وائرس کو پھیلنے سے روکنا ہے۔ بدھ کے روز محکمہ صحت کے حکام نے بتایا کہ اس وقت 9100 سے زائد کورونا کے مریض مختلف ہسپتالوں میں زیر علاج ہیں۔ یہ 25 جون کے بعد سے اب تک کی سب سے بڑی تعداد ہے۔

امریکی خاتون اوّل میلانیا ٹرمپ نے انکشاف کیا ہے کہ صدر ٹرمپ کے چودہ سالہ بیٹے بیرن بھی کورونا سے متاثر ہوئے تھے مگر اب صحت یاب ہوچکے ہیں۔

میلانیا ٹرمپ نے ایک بیان میں کہا کہ ”دو ہفتے قبل جب میں اور صدر ٹرمپ کورونا سے متاثر ہوئے تو اس وقت دھیان فوراً قدرتی طور پر ہمارے بیٹے کی جانب گیا۔ ہمارا خدشہ اس وقت درست ثابت ہواجب بیرن کا کورونا ٹیسٹ بھی مثبت آیا تھا۔ لیکن وہ صحت مند نوجوان ہیں اس لیے خوش قسمتی سے ان میں کورونا کی کوئی علامات ظاہر نہیں ہوئیں۔”